Home / پاکستان کی آٹوانڈسٹری بحران کاشکار — وجوہات ؟

پاکستان کی آٹوانڈسٹری بحران کاشکار — وجوہات ؟

Buyers demand price reduction as rupee strengthens

ویب ڈیسک ۔۔ فائلرزاورنان فائلرزپرودہولڈنگ ٹیکس میں اضافے، 1,300سی سی سے زیادہ گاڑیوں پر ایک فیصد کیپٹل ویلیو ٹیکس (سی وی ٹی) کے نفاذ کے بعد غیر یقینی صورتحال کے پیش نظرآٹو انڈسٹری کےبڑے کھلاڑیوں نے 2022-23میں گاڑیوں کی فروخت میں 30 فیصد کمی کاخدشہ ظاہرکیاہے۔ آٹومیکرزکامزیدکہناہےکہ شرح سودمیں اضافےکےبعدگاڑیوں کی قیمتوں میں اضافہ اس صورتحال میں مزیدنقصان کاباعث بنےگا۔

ڈان میں شائع رپورٹ کےمطابق آٹومیکرزڈالرکی قدراورامپورٹ اخراجات میں اضافےکےباعث عیدالاضحیٰ کےبعدگاڑیوں کی قیمتیں بڑھانےکیلئےپرتول رہےہیں۔ بہت سے لوگوں کاخیال ہےکہ آٹوانڈسٹری اس وقت ایک بحران سےگزررہی ہے۔

انڈس موٹر کمپنی (آئی ایم سی) نے پہلے ہی 18 مئی سے گاڑیوں کی ایڈوانس بکنگ بند کردی ہے، اس کے بعد لکی موٹرکارپوریشن لمیٹڈ (ایل ایم سی ایل) نے 20 مئی سے پیکنٹو آٹومیٹک اینڈ اسپورٹیج جبکہ پاک سوزوکی موٹر کمپنی لمیٹڈنےیکم جولائی سے گاڑیوں کی بکنگ بند کردی ہے۔

یہ فیصلےآٹواسمبلرزنےشرح تبادلہ کے بڑھتے ہوئے بحران اور 20 مئی 2022 سے پرزہ جات اور لوازمات کی درآمد کے لیے لیٹر آف کریڈٹ کھولنے کی اجازت نہ دینے کے اسٹیٹ بینک کے فیصلے کی وجہ سےلیےہیں۔

ڈان سے بات کرتے ہوئے، آئی ایم سی کے سی ای او علی اصغر جمالی نے ایندھن کی بڑھتی ہوئی قیمتوں، آٹو پارٹس کے لیے ایل سی کھولنے پر اسٹیٹ بینک کی پابندیوں اور یکم جولائی سے نافذ کیے جانے والے نئے ٹیکسوں کی وجہ سے مالی سال 23 میں گاڑیوں کی فروخت میں کم از کم 30 فیصد کمی کی توقع ظاہر کی۔ انہوں نےکہاکہ اس صورتحال میں ہمارےپاس قیمتوں میں اضافےکےعلاوہ کوئی چوائس نہیں۔

مالی سال 23 میں فروخت میں 25-30 فیصد کمی کے خوف سے، ایک کورین آٹواسمبلر نے کہا کہ کمپنی نےگاڑیوں کی قیمتوں میں اضافہ نہیں کیا ہے۔ یکم جولائی سے 1,300سی سی سےاوپر کی گاڑیوں پر 1فیصد سی وی ٹی کے نفاذ سے متعلق فنانس ایکٹ کے بعد کچھ تبدیلیاں کی گئی ہیں۔ اس کے نتیجے میں، کیاسٹونک کے دو ماڈلزپرایک فیصدسی وی ٹی 144,250-47,250 روپے میں، تین سپورٹیج ماڈلز 53 ہزارروپے میں،64,990، اورتین سورینٹو ماڈلز 68,360-74,990 روپےکیلئےعائدہے۔

ہونڈااٹلس کے مطابق،سٹی 1.5 پر 1فیصدسی وی ٹی 35,890-38,990 روپے کے درمیان ہے جبکہ ہونڈابی آروی کے دوماڈلزپرسی وی ٹی 42,490-42,740روپے کے درمیان ہے۔ ہونڈاسوک کے چھ ماڈلز پر 1فیصدسی وی ٹی کی قیمت 55,490-66,740 روپے کے درمیان ہے۔

فائلرز اور نان فائلرز پر ود ہولڈنگ ٹیکس کےحوالےسےہونڈااٹلس کےایک اہلکار نے کہا کہ ودہولڈنگ ٹیکس کےمعاملےمیں ہونڈا پروڈکٹ لائن میں فائلرز پرمیں کوئی تبدیلی نہیں ہے۔ تاہم، ہونڈا سٹی 1,200 خریدنے پر نان فائلرز سے 75,000 روپے وصول کیے جاتے ہیں،یہ رقم پہے 50,000روپے تھی۔ 1,301اور600سی سی ورژن کے لیے نان فائلرز کا ریٹ 100,000 روپے کے بجائے 150,000 روپے ہے۔

پاک سوزوکی موٹرکمپنی نے اپنے مجاز ڈیلرز کو بتایا ہے کہ وہ فائلرز سے آلٹو (تمام ویریئنٹس)، بولان اور راوی کے لیے 10,000 روپے وصول کریں جو کہ اس سےپہلے 7,500 روپے تھے، جبکہ نان فائلرز ان ہی ماڈلز پر 15,000 روپے کے بجائے 30,000 روپے ادا کریں گے۔

ویگن آر یا کلٹس (تمام قسمیں) خریدنے میں دلچسپی رکھنے والے انکم ٹیکس فائلرز کو 15,000 روپے کی بجائے 20,000 روپے ادا کرنے ہوں گے، جبکہ سوئفٹ کے خریدار 25,000 روپے ادا کریں گے۔

ویگن آر اور کلٹس کے نان فائلرز کو 30 ہزار کی بجائے 60 ہزار روپے جمع کرانا ہوں گے جب کہ نان فائلر 50 ہزار کی بجائے 75 ہزار روپے جمع کرائے گا۔

ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن سندھ کے ایک اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ موٹر وہیکل رجسٹریشن چارجز پچھلے دو سالوں میں ایک جیسے ہیں لیکن فائلر اور نان فائلر اور سی وی ٹی پر ڈبلیو ایچ ٹی کی شرح یکم جولائی سے بڑھا دی گئی ہے۔

یہ بھی چیک کریں

Mazda to close business in Russia

مزداکاروس میں کاروباربندکرنےکااعلان

ویب ڈیسک – جاپانی کار ساز کمپنی مزدا نے روس میں مکمل طورپرکاروباربندکرنےکا اعلان کیا …