Home / سوشل میڈیابچوں میں اضطراب کاباعث نہیں بنتا،ریسرچ

سوشل میڈیابچوں میں اضطراب کاباعث نہیں بنتا،ریسرچ

social media use in kids

ویب ڈیسک ۔۔ ایک نئی تحقیق کےمطابق سوشل میڈیا کا بڑھتا ہوا استعمال 10 سے 16 سال کی عمر کے بچوں میں بے چینی اورڈپریشن کی علامات کا باعث نہیں بن سکتا۔

نارویجن یونیورسٹی آف سائنس اینڈٹیکنالوجی کےپروفیسرسلجےاسٹینزبیک کہتےہیں دنیامیں سوشل میڈیاکےبڑھتےاستعمال کےساتھ اضطراب اوربےچینی کاپھِیلاءوبھی بڑھ گیاہے،جس کی وجہ سےبہت سےلوگ ان دونوں میں ایک تعلق تلاش کرنےکی کوشش کرتےہیں۔

پروفیسرکےمطابق اگرہم جرنل کمپیوٹرزان ہیومن بی ہیوئیر میں شائع ہونے والی تحقیق کے نتائج پر یقین رکھیں توایسا نہیں ہے۔

اسٹینزبیک کہتےہیں نوجوانوں میں سوشل میڈیا کا استعمال اکثر شدید جذبات پیدا کرتا ہےجووالدین اور پیشہ ورافراد دونوں کیلئےبہت زیادہ باعث تشویش ہے ۔

میڈیکل ڈیلی کی رپورٹ کے مطابق، مطالعہ کے دوران، محققین نے سوشل میڈیا کے استعمال اور دماغی بیماری کی علامات کی نشوونما کے درمیان تعلق کو تلاش کرنے کے لیے ناروے کےشہر ٹرینڈہیم میں چھ سال کے دوران 800 بچوں کابغورمشاہدہ کیا۔

محققین نے ہردوسرے سال ڈیٹا اکٹھا کیا، اس سال سے جس میں بچے دس سال کے تھےاورجب تک کہ وہ 16 سال کی عمر کےنہ ہوجائیں۔

اضطراب اور ڈپریشن کی علامات کی شناخت بچوں اوران کے والدین دونوں کے ساتھ تشخیصی انٹرویوزکےذریعے کی گئی۔

نتیجہ لڑکوں اور لڑکیوں دونوں کے لیے یکساں تھا قطع نظر اس کے کہ بچوں نے اپنے سوشل میڈیا پیجز کے ذریعے پوسٹس اور تصاویر شائع کیں یا دوسروں کی شائع کردہ پوسٹس کو لائیک اور تبصرہ کیا۔

پروفیسرکےمطابق کئی سالوں تک انہی مضامین کی پیروی کرتے ہوئے، گہرائی سے انٹرویوزکے ذریعے ذہنی بیماری کی علامات کو ریکارڈ کرنے اورسوشل میڈیا کے استعمال کی مختلف اقسام کا جائزہ لینے سے، ہمارے مطالعے نے ہمیں دماغی بیماری کی ایک مزید باریک تصویر فراہم کرنے کے قابل بنایا ہے۔

یہ بھی چیک کریں

G Mail Closing down

کیاجی میل بندہونےجارہی ہے؟

ویب ڈیسک ۔۔ دنیاکی مقبول ترین ای میل سروس جی میل کےبارےمیں چنددنوں سےیہ افواہیں …