کورونا وائرس
پاکستان میں
مصدقہ کیسز
(+92 ) 1,529,988
اموات
() 30,379
صحتیاب مریض
1,496,123
فعال کیسز
3,486
Last updated: مئی 26, 2022 - 12:42 صبح (+05:00) دوسرے ممالک
Home / یوکرین حملہ : توانائی کےعالمی بحران کاخطرہ

یوکرین حملہ : توانائی کےعالمی بحران کاخطرہ

Russian attack on Ukraine welcomes global energy crisis

ویب ڈیسک ۔۔ یوکرین پرروسی حملےکےبعدمغربی ملکوں نےتوبےمثال اتحادکامظاہرہ کرتےہوئےروس کےخلاف ایکاکرلیاہےلیکن دوسری جانب مشرق وسطیٰ سےآنےوالےردعمل نےبہت سےلوگوں کوحیران اورپریشان کردیاہے۔ اورتواورامریکاکےقریب ترین اتحادیوں نےبھی کوئی ردعمل دینےکی بجائےچپ سادھ لی ہے۔

قطرجوروس کاقریبی اتحادی سمجھاجاتاہےیوکرین پر روسی حملے کے بعد تمام اسٹیک ہولڈرزکوتحمل سے کام لینے کی اپیل کی، جب کہ اسرائیل، لبنان اور ترکی نےکھل کرروسی حملےکی مذمت کی ہے۔

روس کےبہت قریبی اتحادی اوردوست ملک شام نےروسی اقدام کونیٹوممالک کےاشتعال انگیزاقدامات کانتیجہ قراردیاہے۔

امریکہ کے قریبی اتحادیوں سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات (یو اے ای) کی جانب سے سب سے چونکا دینے والا ردعمل سامنے آیا۔ دونوں ممالک نے ردعمل دینے کے بجائے اس صورتحال پر خاموشی اختیارکرنابہترسمجھا۔

یوکرین پرحملہ: روس کوکس بات کاغصہ ہے؟

روس پرپابندیوں کااعلان
امریکی صدرجوبائیڈن نےروس کی عالمی مالیاتی نظام تک رسائی پرپابندی لگاتےہوئے،ولادی میر پیوٹن کے قریبی ارب پتی ساتھیوں کو نشانہ بنانے والی نئی پابندیوں کا اعلان کیاہے۔ صدربائیڈن کےمطابق یہ جنگ روس نےشروع کی ہےاوراب وہ اس کانتیجہ بھگتےگا۔

مزید برآں، امریکی صدر نے کہا کہ پابندیاں پیوٹن کےارب پتی ساتھیوں کو نشانہ بنائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ ہم آنے والے دنوں میں ان کرپٹ ارب پتیوں کومزیدپابندیوں کانشانہ بنائیں گے۔

امریکی صدرکےمطابق اقتصادی پیوٹن کو ذاتی طور پر نشانہ نہیں بنایا گیا، لیکن ممکن ہےکہ روسی صدرکےخلاف بھی پابندیاں سامنےآجائیں۔

اس کے بعد، برطانیہ نےروسی ائیرلائنوں، چھ روسی بینکوں، 11 کمپنیوں اورآٹھ افراد کو نشانہ بنایا، جبکہ یورپی یونین نے اعلان کیا کہ وہ 27 ممالک کے بلاک میں روسی اثاثے بھی منجمد کر دے گا۔

پابندیوں کےاقتصادی اثرات
مشرق وسطیٰ میں توانائی،سیاحت اورزراعت کےشعبوں کاروسی جارحیت سے بری طرح متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

دنیا میں گندم کا سب سے بڑا درآمد کنندہ مصر، اپنی گندم کا 85 فیصد روس اور یوکرین سے حاصل کرتا ہے، جب کہ لیبیا، تیونس اور لبنان اپنی گندم کا 40 فیصد سے زیادہ یوکرین سے درآمد کرتے ہیں۔

یوکرین پرروسی حملےکےبعدجمعرات کو تیل کی قیمت 105 ڈالر فی بیرل سے تجاوز کر گئی، کیونکہ بہت سے لوگوں کو خدشہ تھا کہ حملہ ماسکو سے توانائی کے بہاؤ میں خلل ڈال سکتا ہے۔

واضح رہےکہ تیل کی پیداوار کے علاوہ، روس قدرتی گیس پیدا کرنے والا دنیا کا دوسرا سب سے بڑا ملک بھی ہے، اور اس تنازعے سے توانائی کی عالمی منڈیوں کو نقصان پہنچنے کا خطرہ ہے۔

روس کابرطانیہ پرفضائی پابندیوں کااعلان
برطانیہ کی جانب سےپابندیوں کاجواب دیتےہوئےروس نےبھی برطانوی ائرلائن کمپنیوں کےروسی فضائی حدودمیں داخلےپرپابندی لگانےکااعلان کیاہے، برطانوی ائرلائنیں نہ توروسی فضائی حدود استعمال کرسکتی ہیں اورنہ ہی روسی ائرپورٹوں پراترسکتی ہیں۔

یہ بھی چیک کریں

Nightmare on temple street

مورتی کےبھوت ۔ چوروں نےتوبہ کرلی

ویب ڈیسک ۔۔ بھارتی ریاست اترپردیش کےضلع چتراکوٹ میں چوروں کےایک گینگ کوڈراونےخوابوں نےتوبہ کرنےپرمجبورکردیا۔ …