کورونا وائرس
پاکستان میں
مصدقہ کیسز
(+49 ) 1,529,834
اموات
() 30,379
صحتیاب مریض
1,494,141
فعال کیسز
5,314
Last updated: مئی 23, 2022 - 7:42 شام (+05:00) دوسرے ممالک
Home / نوازشریف کوپکڑنامشکل نہیں ، بہت مشکل

نوازشریف کوپکڑنامشکل نہیں ، بہت مشکل

Govt can not get Nawaz Sharif back

ویب ڈیسک ۔۔ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) حکومت کی جانب سے سابق وزیر اعظم نواز شریف کے بھائی شہبازشریف پرقانونی دباؤ بڑھا کرنوازشریف کی حالت بارے تازہ ترین معلومات حاصل کرنے کی کوششیں شایداتنی نتیجہ خیز ثابت نہ ہوں جتنی کہ حکومت نےامیدیں لگالی ہیں۔

ڈان اخبارمیں شائع ہونےوالی ایک رپورٹ کےمطابق پاکستان مسلم لیگ نواز کے اندرونی ذرائع اور شریف خاندان کے قریبی ذرائع سے ہونے والی بات چیت سے پتہ چلتا ہے کہ حکومت نے جس قسم کی تفصیلی میڈیکل رپورٹس شہبازشریف سےمانگی ہیں وہ شاید دستیاب نہ ہوں، کیونکہ سابق وزیر اعظم نے ابھی تک کسی ایسے طریقہ کارکےمطابق علاج نہیں کرایاجس کےبارےمیں رپورٹس مانگی گئی ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعظم کو دل کےعلاج کیلئے نئے طریقہ کار سے گزرنے کا مشورہ دیا گیا ہے جو کہ خطرے سے خالی نہیں ہے۔ اس مسئلے کو مزید پیچیدہ کوروناکےوبائی مرض نےکردیاہے جس کی وجہ سے برطانیہ میں ایمرجنسی کےبغیرزیادہ ترسرجریزکوملتوی کیاجارہاہے۔

وزیرصحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد کے خیال میں، مسٹر شریف کے پاس علاج کے لیے کافی وقت ہے۔ اگر وہ دو سال تک اکیلے دوائیوں پر زندہ رہےہیں ، تو وہ مستحکم ہیں،اوریہ پاکستان واپس جانے کے لیے کافی ہے۔

نوازشریف کوچھوڑیں،عوام پرتوجہ کریں،شجاعت حسین

نوازشریف نومبر 2019 سے برطانیہ میں ہیں، جب ان کا طبی ٹیسٹ ہو رہا تھا۔ جنوری 2020 میں، ڈاکٹروں نے اندازہ لگایا کہ آیا انہیں دل کے آپریشن، بائی پاس یا سٹینٹ کی ضرورت ہوگی۔ ان کے ہیماٹولوجیکل مسائل کی وجہ سے خاندانی ذرائع نے انہیں علاج کیلئےامریکہ لےجانےپربھی غورکیاتھا۔

اس کے بعد وبائی بیماری کوروناشروع ہوگئی اوربرطانیہ کے بہت سے اسپتالوں کو انفیکشن کی زیادہ شرح کی وجہ سے عملے کی کمی کا سامنا کرنا پڑا۔

تاہم، برطانیہ صرف مارچ 2020 میں قومی لاک ڈاؤن میں چلا گیا کیونکہ معاملات میں اضافہ ہوا اور ہسپتالوں نے ہنگامی حالتوں کا اعلان کیا، اور یہ واضح نہیں ہے کہ سابق وزیر اعظم کی جنوری اور مارچ 2020 کے درمیان سرجری کیوں نہیں ہوئی؟

مسلم لیگ (ن) کے اندرونی ذرائع کے ساتھ بات چیت سے پتہ چلتا ہے کہ مسٹر شریف کو "کثیر جہتی” دل اور خون کے مسائل ہیں۔

سابق وزیر اعظم کو ماضی میں (2010 اور 2016) میں دو بڑی دل کی بیماریاں ہوئی ہیں اور 2019 میں تھرومبوسائٹوپینیا کا تجربہ ہوا تھا، جب انہیں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت نے علاج کے لیے بیرون ملک جانے کی اجازت دی تھی۔

راوی اربن پراجیکٹ : سپریم کورٹ سےبڑافیصلہ آگیا

شریف خاندان کے ذرائع نے بتایا کہ چونکہ طریقہ کار کے لیے تجربہ کار سرجنز کی ضرورت ہوتی ہے ۔ خاص طور پر نواز کوگزشہ طبی مسائل میں پیش آنے والی پیچیدگیوں کے پیش نظر، اس بات کا امکان نہیں ہے کہ خاندان ان کا علاج پاکستان میں کرانےپرراضی ہوگا۔

پنجاب حکومت نے حال ہی میں ایک نو رکنی اسپیشل میڈیکل بورڈ (ایس ایم بی) تشکیل دیا ہے جو سابق وزیراعظم کی میڈیکل رپورٹس کے طور پر جمع کرائی گئی دستاویزات کو ان کے برطانیہ کے معالج ڈاکٹر ڈیوڈ لارنس کی طرف سے جانچے گا اور مریض کی جسمانی حالت اور اس کی صلاحیت کے حوالے سے اپنی ماہرانہ طبی رائے دے گا،پاکستان واپس جانے کے لیے۔

تاہم، بورڈ کے ارکان نے دعویٰ کیا کہ وہ نواز کی موجودہ طبی تشخیص، خون کی رپورٹس، امیجنگ کے نتائج اور طریقہ کار کی تفصیلات کے بغیر ان کی حالت یا سفر کرنے کی صلاحیت کے بارے میں کوئی منظم رائے نہیں دے سکتے۔

نوازشریف کےذاتی معالج ڈاکٹر عدنان خان، پاکستان میں شریف خاندان کے معالج جو نواز کے ساتھ صحت کےحوالےسےجڑےرہے، نواز کی صحت کی حالت کے بارے میں خط کےذریعےبورڈ کے ساتھ شیئر کریں گے۔

ادھرڈاکٹریاسمین راشدکےمطابق میڈیکل بورڈکیلئےمحض خط لکھناکافی نہیں ہوگا ۔ 2019میں نوازشریف کےلندن جانےکےفوری بعدڈاکٹرعدنان نےنوازشریف کی نامکمل میڈیکل رپورٹس بھیجیں ۔ میں نےانہیں مکمل رپورٹس بھجوانےکیلئےکہالیکن وہ آج تک نہیں آئیں۔

سیاح مری سےروٹھ گئے،وادی ویران،تاجرپریشان

یہ بھی چیک کریں

Fazalur Rehman Peshawar Conference

عمران کیلئےحکیم ثنااللہ کی دوائی ،فضل الرحمان

مانیٹرنگ ڈیسک ۔۔ جےیوآئی کےسربراہ مولانافضل الرحمان نےپشاورمیں منعقدہ تقدس مسجدنبوی کانفرنس سےخطاب کرتےہوئےمریم نوازپرعمران …