Home / نان ڈیری دودھ اوربچوں کی نشوونما

نان ڈیری دودھ اوربچوں کی نشوونما

Non dairy milk for infants growth

ترجمہ و تحقیق : محمدظہیر ۔۔ ہر کھانے کے ساتھ دودھ کا ایک گلاس پیناہم سب کےبچپن کی لازمی غذا ہوا کرتا تھا۔ صحت مند ہڈیوں، دانتوں اور نشوونما کے لیے دودھ پینےپربہت زوردیاجاتاتھا۔ بہت سےبڑوں کو یاد ہے کہ ان کے والدین انہیں متوازن غذا کےلئےرات کے کھانے میں اپنا دودھ پینے کی ترغیب دیتےتھے۔

بچوں کی غذاکےطورپرگائے کا دودھ کم مقبول ہوا ہے کیونکہ زیادہ ترخاندان ڈیری سے پاک طرززندگی گزارنے کا فیصلہ کرتے ہیں، یا تو ذاتی ترجیحات یا کھانے کی الرجی کی وجہ سے۔

پرانی سوچ کےوالدین اپنےبچوں کوایک سال تک ماں کےدودھ تک محدودرکھتےاوراس کےبعد گائے کادودھ عام طور پر چھوٹے بچوں کے لیے اہم مشروب کے طور پر متعارف کرایا جاتا تھا۔

آج، کچھ بچوں کو کبھی بھی گائے کا دودھ نہیں مل سکتاکیونکہ ان کے پاس بچپن سے ہی ڈیری فری فارمولہ ہوتا ہے۔ اس کےعلاوہ پہلےسےکہیں زیادہ ڈیری فری آپشن جیسےکہ بادام کا دودھ، سویا دودھ، اور ناریل کے دودھ وغیرہ موجود ہیں۔

جیسے جیسے زیادہ بچے اپنی خوراک میں نان ڈیری دودھ کے ساتھ بڑے ہوتے ہیں، ڈاکٹر اور محققین اس بات پر غور کر رہے ہیں کہ نان یاغیر ڈیری دودھ بچوں کی صحت پر کیسےاثر انداز ہو سکتا ہے؟

دودھ کے ان متبادلات کے طویل مدتی اثرات کے بارے میں تحقیقی مقالات اب بھی سامنے آ رہے ہیں، لیکن یہاں ہم نے اب تک یہ سیکھا ہے کہ غیر ڈیری دودھ کس طرح بچے کی نشوونما اور نشوونما کو متاثر کر سکتا ہے؟

نان ڈیری دودھ اوربچےکی نشوونما
امریکن جرنل آف کلینیکل نیوٹریشن میں شائع ہونے والی 2017 کی ایک تحقیق میں پتا چلا کہ روایتی گائے کا دودھ نہ پینے والے بچوں کےقدمیں اونچائی کم دیکھی گئی۔

محققین نے کینیڈا میں 24 سے 72 ماہ کی عمر کے 5,034 صحت مند بچوں کا معائنہ کیا۔ جب انہوں نے گائے کا دودھ نہ پینے والے بچوں کا موازنہ کیا تو محققین نے پایا کہ کم قد اور گائے کا دودھ نہ پینے کے درمیان اندرونی تعلق ہے۔

گائے کےعلاوہ دودھ پینےوالےبچے اپنےدیگرہم عمربچوں سےاوسطاً 0.4 سینٹی میٹر چھوٹے تھے۔ مثال کے طور پر، ایک 3 سالہ بچہ جس نے تین کپ گائے کا دودھ پیا، وہ اس بچے سے 1.5 سینٹی میٹر اونچا ہو سکتا ہے جو دن میں تین کپ غیر گائے کا دودھ پیتا ہے۔

تاہم، یہ یاد رکھنا ضروری ہے کہ اس مطالعے کے نتائج صرف یہ ظاہر کرتے ہیں کہ قدمیں کمی اور دودھ پینے کے درمیان ممکنہ تعلق ہے۔ یہ یقینی طور پر ثابت نہیں ہوتا کہ غیر گائے کا دودھ پینے سے بچے چھوٹے ہوتے ہیں۔

بہت سے عوامل بچوں میں نشوونما کے فرق کو متاثر کرتے ہیں۔ محققین ابھی تک دودھ کی مقدار اور بچپن کی نشوونما اور نشوونما کے درمیان تعلق کے حتمی ثبوت تلاش کر رہے ہیں۔

بادام دودھ اورالرجی
جب شیر خوار بچوں کو گائے کے دودھ سے الرجی یا عدم برداشت ہوتی ہے، تو ان کے والدین کے لیے یہ جاننا مشکل ہو سکتا ہے کہ اسے تبدیل کرنے کے لیے کون سا غیر ڈیری دودھ بہترین انتخاب ہے۔

5سے 9 ماہ کے بچوں میں کی گئی ایک تحقیق میں پتا چلا کہ بادام کا دودھ بچپن میں گائے کے دودھ کا سب سے مناسب متبادل ہو سکتا ہے۔
اس تحقیق میں پتا چلا کہ گائے کے دودھ سے الرجی والے شیر خوار جن کو بادام کا دودھ دیا گیا ان کی نشوونما کے نتائج ان بچوں کے مقابلے میں بہتر ہوتے ہیں جنہیں یا تو خصوصی غیر ڈیری پروٹین فارمولہ یا سویا پر مبنی فارمولا دیا گیا تھا۔

دائمی قبض کچھ بچوں کے لیے صحت کا مسئلہ ہے جس کے لیے اکثر والدین کو اپنے بچے کی خوراک پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہوتی ہے۔ ایک تحقیق سے پتا چلا ہے کہ سویا دودھ دائمی قبض کے شکار چھوٹے بچوں کی مدد کر سکتا ہے۔

15ماہ سے کم عمر کے بچے جو دائمی قبض کے ساتھ جدوجہد کرتے ہیں وہ سویا پر مبنی فارمولے سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔ اس کے برعکس، گائے کے دودھ سمیت فارمولے دائمی قبض والے بچوں میں علامات کو خراب کر سکتے ہیں۔

About Zaheer Ahmad

Muhammad Zaheer Ahmad is a senior journalist with a career spanning over 20 years in print and electronic media. He started from the Urdu language Daily Din, proceeding to Daily Times, where he stayed as sub-editor for 2 years. In 2008, he joined broadcast journalism as a Producer at the English language Express 24/7, and later to its major subsidiary, Express-News. Zaheer currently works there as a Senior News Producer. He is also the Managing Editor of newsmakers.com.pk. Zaheer can be reached at [email protected]

یہ بھی چیک کریں

twitter miltdown

ٹویٹرختم ہونےجارہاہے؟اندرکی باتیں باہرآگئیں

ایلون مسک کےٹویٹرکاچارج سنبھالتےہی جیسےایک بھونچال آگیاہےجوسنبھلنےکانام نہیں لےرہا۔ ایک کےبعدایک مسئلہ ملازمین اورمنیجمنٹ کیلئےدردسربناہواہے۔ …