Home / پی ایس ایل کیلئےسخت حفاظتی پروٹوکولزکااعلان

پی ایس ایل کیلئےسخت حفاظتی پروٹوکولزکااعلان

PSL 7 Today's Matches

ویب ڈیسک ۔۔ پاکستان کرکٹ بورڈنےایچ بی ایل پی ایس ایل 7 کےمحفوظ انعقادکیلئےسخت حفاظتی پروٹوکولزکےنفاذکااعلان کیاہےاورکہ بھی واضح کردیاہےکہ خلاف ورزی پر مختلف پابندیاں عائد ہوں گی،تنبیہ یا سرزنش کےبعدمیچ فیس کا 25 سے 50 فیصد جرمانہ یا ایک سے 5 میچز کی پابندی یابھی سنگین خلاف ورزی پرایونٹ سےبھی نکالا جاسکتا ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے میڈیکل ایڈوائزری پینل نے ایچ بی ایل پاکستان سپر لیگ 7 کے کامیاب انعقاد کو یقینی بنانے کے لیےجو حفاظتی پروٹوکولز جاری کئےہیں ان کی تفصیل درج ذیل ہے:

ایونٹ 27 جنوری سے 27 فروری تک کراچی اور لاہور میں کھیلا جائے گا۔ان پروٹوکولز میں ٹیسٹنگ کے حوالے سے ایونٹ کے شرکاکیلئے 20 جنوری سے روم آئسولیشن کا آغاز ہوچکا ہے، انہیں کورونا کے 2 منفی ٹیسٹ آنے پرمنیجڈ ایونٹ اینورینمنٹ میں داخلے کی اجازت ہو گی، 27 جنوری سے 7 فروری تک ٹورنامنٹ کے پہلے مرحلے میں شریک تمام افراد کی چار مرتبہ پی سی آر ٹیسٹنگ کی جائے گی، 10 فروری سے 27 فروری تک شرکاء کی سات مرتبہ پی سی آر ٹیسٹنگ کی جائے گی۔

کسی بھی ٹیسٹ کا رزلٹ مثبت آنے پر مذکورہ فرد کو سات دن کے لیےقرنطینہ کردیاجائےگااورپھراینٹیجن ٹیسٹنگ کا رزلٹ منفی آنے پر اسے دوبارہ مینیجڈ ایونٹ ماحول میں داخلے کی اجازت ہوگی۔

انٹیجن ٹیسٹنگ کا رزلٹ مثبت آنے کی صورت میں مذکورہ شخص کو مزید تین روز کے لیےآئسیٹ کردیاجائےگا۔کسی بھی کھلاڑی اوراسپورٹ اسٹاف کومینیجڈ ایونٹ ماحول میں داخلے یا دوبارہ داخلے کے لیےتین روزتک روم آئسولیشن اختیارکرناہوگی ۔

انہیں کورونا کے دو ٹیسٹ منفی آنے کےبعدہی مینیجڈ ایونٹ اینوائرنمنٹ میں داخلے کی اجازت ملے گی، ہر ٹیم کو ہوٹل کی علیحدہ منزل پر کمرے دیے گئے ہیں، تین روزہ روم آئسولیشن کے دوران صفائی والوں سمیت ہوٹل عملے کو کمروں میں داخلے کی اجازت نہیں۔

اس دوران تمام ضروری سامان کمروں کے باہر رکھا جائے گا۔ قرنطینہ مکمل کرنے کے بعدصفائی والے عملے کو کمروں کو صاف کرنے کی اجازت ہوگی تاہم اس دوران اس بات کو یقینی بنایا جائے گا کہ مہمان کمرے میں نہ ہو۔ ہر ٹیم کے لیے ایک علیحدہ کامن روم بنایاگیاہے۔

دوسری ٹیم کے کسی بھی رکن کو اس کمرے میں داخلے کی اجازت نہیں۔ منظور شدہ ڈلیوری سروس کے ذریعے ہوٹل کے باہر سے کھانا منگوانے کی اجازت ہے تاہم ڈلیوری اس کام کے لیے مخصوص عملے کے ارکان کو موصول ہوگی، جو اسے سینیٹائز کرنے کے بعدمذکورہ ٹیم کی منزل پر پہنچائیں گے۔

تمام شرکاء کھانا کھانے کے بعد، 20 سیکنڈ تک اپنے ہاتھ دھونے کے پابند ہونگے۔ ٹیموں کی گراؤنڈ آمد سے قبل ڈریسنگ رومز کو صاف کیا جائے گا اس کام کے لیے ایک عملہ مخصوص کیاگیاہے۔ ڈریسنگ روم تک رسائی رکھنے والے اس عملے کے ارکان کیلئے سماجی فاصلہ برقراررکھنا لازمی ہے۔

کھلاڑی گیند پر تھوک کا استعمال نہیں کرسکتے۔ تمام کھلاڑیوں کو صرف اپنے سامان کو استعمال کرنے کی اجازت ہوگی۔کھلاڑیوں، اسپورٹ اسٹاف اورمیچ آفیشلز سے ملاقات سے 48 گھنٹے قبل گراؤنڈ اسٹاف میں شامل تمام ارکان کی پی سی آر ٹیسٹنگ کروائی جائے گی۔

ان تمام ارکان کو گراؤنڈ میں ڈیوٹی کے دوران اپنے ناک اور منہ کو ماسک سے ڈھانپنا ہوگا۔ وارم اپ اور ٹریننگ کے دوران کھلاڑی ماسک اتارسکیں گے۔ٹاس کے موقع پرسماجی فاصلہ برقراررکھتے ہوئے ہاتھ ملانے سےمنع کیاگیاہے۔ پوسٹ میچ تقریب کے موقع پربھی سماجی فاصلہ برقرار رکھتے ہوئے ہاتھ ملانامنع ہے۔

کورونا کیسز مثبت آنے کی صورت میں اس ٹیم کے ڈاکٹریا منیجر کو مذکورہ فرد کو فوری طور پر آئسولیشن میں بھیجنا ہوگا۔ آئسولیشن میں جانے کے بعد مذکورہ شخص کی پی سی آر ٹیسٹنگ کی جائے گی۔ اس شخص سےگزشتہ 48 گھنٹے میں ملاقات کرنے والے تمام افراد کو بھی آئسولیٹ کرکے کوویڈ 19 ٹیسٹ کروائے جائیں گے۔

معمولی خلاف ورزیاں
پروٹوکولز کی خلاف ورزی کرنے پر پابندیاں عائد ہوں گی۔ مقررہ زون کے باہر سے کسی فرد سے سماجی فاصلہ (کم از کم 6 فٹ) برقرار نہ رکھنا، کسی دوسرے شخص سے بوتلیں، تولیے، کپڑے یا اپنے کرکٹ کے سامان کا تبادلہ کرنا، میچ سے پہلے اور بعد میں شرکاء سے ہاتھ ملانا،میچ کے اختتام پر گراؤنڈ، ڈریسنگ روم سے لانڈری نہ ہٹانا، میچ منیجر کی اجازت کے بغیر کسی دوسرے آئسولیشن روم میں داخل ہونا، فزیوتھراپسٹ، مساجرز کا ٹریٹمنٹ دوران اپنی ناک اور منہ کو ماسک سے نہ ڈھانپنا، انفرادی فزیو تھراپی سیشنز میں 15 منٹ سے زائد وقت گزارنا، ممنوع علاقے میں اجازت کے بغیر جانا، فیلڈ آف پلے میں ببل کے باہر کے کسی فرد سے ملنا، کسی بھی پروٹوکول کی خلاف ورزی کرنا ایچ بی ایل پی ایس ایل کے سیفٹی پروٹوکولز کی چھوٹی موٹی خلاف ورزی تصور کی جائے گا۔

کوویڈ 19 ٹیسٹ کے مثبت کیسز کو دیکھنے والے اسٹاف کو پی پی ای کٹ میں رہنا ہوگا۔ تمام ٹیموں کے فزیوزباقاعدگی سے اپنی ٹیم کے ارکان کی مانیٹرنگ کرتے رہیں گے۔ اگر آئسولیشن کے دوران کسی شخص کی طبعیت خراب ہوگی تو اسےاسپتال منتقل کیا جائے گا۔

سنگین خلاف ورزیاں
بڑی خلاف ورزیوں میں صفائی والے عملے کے علاوہ کسی اور کو ہوٹل کے کمرے میں آنے کی دعوت دینا، اس صورت میں اپنے ناک اور منہ کو ماسک سے نہ ڈھانپنا، بی بی آئی ایم کی اجازت کے بغیر قرنطینہ کے دوران کمرے سے باہر نکلنا، بی بی آئی ایم کو بتائے بغیر ببل کے باہر سے کوئی بھی چیزوصول کرنا، بی بی آئی ایم کے استفسار کے باوجود علامات سے آگاہ نہ کرنا، جو علامات ظاہر ہوچکی ہوں ان سے متعلق بی بی آئی ایم کو آگاہ نہ کرنا، کوئی بھی ایسااقدام کرنا جو علامات کو چھپائے یا ٹیسٹ کے نتائج کو تبدیل کر سکتا ہے۔

کسی ایسے شخص سے ملنا جس میں علامات ظاہر ہوں یا جس کا ٹیسٹ مثبت آیا ہو،کوویڈ 19 کیسز یاجن افراد میں علامات ظاہر ہوں ان سے متعلق کسی بھی معلومات کا غیرمنظور شدہ افرادسے تبادلہ کرنا شامل ہیں،مندرجہ بالا خلاف ورزیوں پر ٹورنامنٹ کوویڈ 19 منیجمنٹ کمیٹی منظور کردہ پابندیاں عائد کرنےکی مجازہے۔

یہ بھی چیک کریں

Sri Lanka win Asia Cup

سری لنکاچھٹی بارایشئین چیمپئن،پاکستان ہارگیا

مانیٹرنگ ڈیسک ۔۔ سری لنکاپاکستان کوہراکرچھٹی بارایشیا کپ کاایشین چیمپئن بن گیا۔ آوٹ آف فارم …