Home / اربوں ڈالرکی گیمنگ انڈسٹری

اربوں ڈالرکی گیمنگ انڈسٹری

Pakistan's role in Gaming Industry

یہ کہاجائےکہ کھیلوں سےمحبت کرنےوالےملک پاکستان میں گیمنگ انڈسٹری کوبری طرح نظراندازکیاگیاہےتوغلط نہ ہوگا۔

ڈان اخبارمیں شائع ایک رپورٹ کےمطابق پاکستانی گیمرشمائل حسن نےڈوٹا 2 کھیل کر 3.8 ملین ڈالر کمائے ہیں۔ موجودہ شرح تبادلہ پر یہ رقم 675 ملین روپے سے زیادہ ہے (67.5 کروڑ) ۔ اتنی رقم لاہور یونیورسٹی آف مینجمنٹ سائنسز(لمز) کاایک بہترین گریجویٹ کسی بہترین ملٹی نیشنل کمپنی میں پوری زندگی کام کرےتواتنی رقم کماپائےگا۔

عالمی سطح پرگیمنگ انڈسٹری کاسالانہ حجم 200ارب ڈالربنتاہےاوراس کی سالانہ گروتھ ریٹ کاتناسب 9.64فیصدبنتاہے۔ اس قدرپوٹینشل کےباوجودپاکستان میں اس منافع بخش صنعت کوبری طرح سےنظراندازکیاگیاہے۔

ٹیک برآمدات 2ارب ڈالرسے تجاوز کر چکی ہیں لیکن اس میں گیمنگ انڈسٹری کا حصہ نہ ہونےکےبرابرہے۔ اس کے برعکس ترکی کی گیمنگ کمپنیوں نے اس سال 238 ملین ڈالر اکٹھے کیے ہیں۔

پاکستان میں اس صنعت میں تقریباً 12,000-15,000 افراد کام کررہے ہیں۔ایپی فینی گیمزکےشریک بانی ثمرحسن نےغیرمطبوعہ انٹرنیشنل گیم ڈیولپرز ایسوسی ایشن کی رپورٹ کے ذریعے دستیاب ڈیٹا سے یہ بات بتائی۔ ایک اندازےکےمطابق ہر سال اس صنعت میں مقامی طور پر $25 ملین تک کمایا جاتا ہے۔

پروگیمنگ، گیمنگ انڈسٹری کا ایک اہم حصہ ہےاورای اسپورٹس (الیکٹرانک اسپورٹس) اس کی ذیلی شاخ ہے۔

ای سپورٹس کمائی کے حوالے سے پاکستان 150 ممالک میں 29 ویں نمبر پر ہے، 278 مقامی کھلاڑی مجموعی طور پر 4.78 ملین ڈالر کماتے ہیں۔ گیمز کی سٹریمنگ اپنے آپ میں ایک ریونیو چینل ہے۔

مس ثمرحسن کےمطابق جہاں اربوں کھلاڑی (دنیا بھر میں 3.24 بلین گیمرز) اوران کےعلاوہ سامعین ہیں، وہاں مونیٹائزیشن اور اشتہارات کےذریعے آمدنی ہوتی ہے۔ دنیاکے دوسرے ممالک میں مناسب اکیڈمیاں ہیں جہاں اسکول کی سطح پرای گیمنگ پڑھائی جاتی ہے۔

ایک اور اہم کیٹگری مختلف صنعتوں کی گیمیفیکیشن ہے۔ ایک ایسے کھیل کا تصور کریں جس میں مختلف مالیاتی تصورات کی وضاحت کی جا سکے، مثال کے طور پر، بچت۔

مس حسن کےمطابق مرکزی کردار بچت کرتے ہیں اور پھر کسی دکان میں سرمایہ کاری کرتے ہیں یا کپڑوں پر خرچ کرتے ہیں۔ مالیاتی مصنوعات اور کیے گئے انتخاب کے نتائج کو شامل کرتے ہوئے مختلف منظرنامے بنائے جا سکتے ہیں۔

اگرچہ اسےزیادہ تر بچوں تک محدودسمجھاجاتاہے، گروتھ انجینئرنگ کے اعدادوشمار کے مطابق، گیمیفیکیشن کا اطلاق موسمیاتی تبدیلی سے لے کر تعلیم تک مختلف شعبوں میں ہو سکتا ہے۔

چندسالوں کےدوران عالمی سطح پرگیمنگ انڈسٹری کاحجم 30.7ارب ڈالرتک پہنچنےکی توقع ہےلیکن بدقسمتی سےپاکستان کااس میں حصہ نہ ہونےکےبرابرہے۔

محترمہ حسن کہتی ہیں پاکستان خدمات اور گیمز کو بطور مصنوعات فراہم کرنے میں پھنسا ہوا ہے۔ پروگرامرز اور ڈیزائنرز ایک گیم بناکراسے کسی بین الاقوامی پبلشر کو دیتے ہیں جو اس کے بعد آمدنی کا بڑا حصہ گھر لے جاتے ہیں۔

پاکستان کی مہارت لڈو یا کینڈی کرش جیسی ہائپر آرام دہ گیمز میں ہے۔ دوسری جانب لاکھوں ڈاؤن لوڈز کی اشتہاراتی آمدنی پبلشرکےکھاتےمیں چلی جاتی ہے۔ ہمارےہاں جدت اور تخلیقی صلاحیتوں کے بجائے کلوننگ زیادہ عام ہے جہاں ایک مقامی ڈویلپر کینڈی کرش کا تصور لیتا ہے لیکن کینڈی کے بجائے زیورات کا استعمال کرتا ہے۔

زیادہ تر چھوٹے شعبوں کی طرح گیم ڈویلپرز کے پاس سرمائےکی شدیدکمی ہوتی ۔حکمت عملی اور میدان جنگ کے کھیل جیسی گیمزبنانےمیں لاکھوں ڈالر کی سرمایہ کاری کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس کےمقابلےمیں ایک چھوٹی گیم 2سے4ہزارڈالرمیں ایک ہفتےکےاندربنائی جاسکتی ہے۔

مس حسن کےمطابق وقت آگیاہےکہ ہم اپنےبچوں کوانکی سالگرہ پرکوئی ریاضی کاپزل دینےکی بجائےگیمنگ کنسول دیناشروع کریں تاکہ وہ آنےوالےوقتوں میں اربوں ڈالرکی عالمی صنعت میں اپناحصہ ڈالنےکےقابل بن جائیں۔

About Zaheer Ahmad

Muhammad Zaheer Ahmad is a senior journalist with a career spanning over 20 years in print and electronic media. He started from the Urdu language Daily Din, proceeding to Daily Times, where he stayed as sub-editor for 2 years. In 2008, he joined broadcast journalism as a Producer at the English language Express 24/7, and later to its major subsidiary, Express-News. Zaheer currently works there as a Senior News Producer. He is also the Managing Editor of newsmakers.com.pk. Zaheer can be reached at [email protected]

یہ بھی چیک کریں

SC throws Hamza Shehbaz

دوسروالاانصاف ۔۔

بہت زیادہ غیرجانبدارہوکربھی سوچتاہوں توسمجھ نہیں آتاکہ وہ کون ساغصہ ،بغض یاعنادہےجوادارےمسلم لیگ ن اوراس …