کورونا وائرس
پاکستان میں
مصدقہ کیسز
(+930 ) 950,768
اموات
(+39) 22,073
صحتیاب مریض
895,690
فعال کیسز
33,005
Last updated: جون 23, 2021 - 11:39 شام (+05:00) دوسرے ممالک

کویت پربھی غربت کےسائےمنڈلانےلگے

Kuwait Economy

ویب ڈیسک ۔۔ کوروناوائرس نےجہاں دنیاکی بڑی بڑی ریاستوں کوہلاکررکھ دیاہےوہیں دنیا کےامیر ترین ملکوں میں سے ایک کویت پرکوروناکےمہلک واراس طرح سےلگےہیں کہ اس ملک کا خزانہ تیزی سےخالی ہوتاجا رہا ہے۔

معروف امریکی میگزین بلوم برگ نے اپنی حالیہ ایک رپورٹ میں انکشاف کیاہے کہ تیل کی دولت سے مالامال دنیا کی امیر ترین ریاستوں میں سے ایک کویت ہے لیکن اب یہ صورتحال تیزی سے تبدیل ہو رہی ہے۔ بلومبرگ نےاس تبدیلی کی وجہ بھی بتائی ہے۔

تیل پیدا کر نے والے ممالک کی تنظیم اوپیک نے رواں سال کورونا وائرس کے باعث تیل کی عالمی طلب میں کمی کا جائزہ لیا اور قیمتوں کا ازسر نو تعین کیا لیکن 40 ڈالرز فی بیرل قیمت کو اب بھی ناکافی سمجھا جا رہا ہے۔

کویت کے سابق نائب وزیر اعظم اور 2016 میں اس وقت کے وزیر خزانہ انس الصالح نے خبردار کیا تھا کہ وقت آگیا ہے کہ کویت اپنےاخراجات میں کمی کرکے تیل کےبغیروالی زندگی کے لیے خود کو تیار کرے۔ لیکن انس الصالح کی بات کو اس وقت کسی نے بھی سنجیدہ نہیں لیابلکہ لوگوں اس بات کو مضحکہ خیز قرار دیا۔

لیکن اب حال ہی میں مستعفی ہونے والے وزیرخزانہ بارک الشیطان نے گزشتہ ماہ خبردار کیا تھا کہ اکتوبر کے بعد ملک کے پاس تنخواہیں دینے کے لیے پیسے نہیں بچیں گے۔

سعودی عرب سمیت تمام خلیجی ریاستیں اس وقت معاشی پالیسیوں میں تبدیلیاں لا رہی ہیں اور خود کو تیل کی معیشت کے بعد کی دنیا کے لیے تیارکر رہی ہیں۔

سعودی عرب نے گزشتہ سالوں کے دوران اپنے ملک میں معاشی اصلاحات لاتے ہوئے عوام پر کئی نئے ٹیکسز عائد کیے جب کہ بحرین اور اومان جیسی ریاستیں اپنے امیر پڑوسیوں سے قرض لے کر معاشی مشکلات کا مقابلہ کر رہی ہیں۔

متحدہ عرب امارات نے بھی تیل پر انحصار ختم کرکے دبئی کو لاجسٹک اور فنانشل حب میں تبدیل کر دیا ہے لیکن کویت ایسی تبدیلیاں لانے میں سستی کا مظاہرہ کر رہا ہے جس کی بنیادی وجہ وہاں کی منتخب پارلیمنٹ اور حکومت جس کے وزیراعظم کو ریاست کے امیر منتخب کرتے ہیں، کے درمیان اختلافات ہیں۔

اس بحران کے باجود ایسا نہیں کہ کویت کے پاس پیسے نہیں ۔ کویت نے تیل ختم ہونے کے بعد بھی ترقی کے سفر کو جاری رکھنے کے لیے دنیا کو چوتھا بڑا 550 ارب ڈالرز کا فنڈ قائم کر رکھا ہے لیکن وہ فی الحال اسے استعمال نہیں کر سکتا۔

کچھ کویتیوں کا ماننا ہے کہ اب وقت آ گیا ہے کہ اس فنڈ کو استعمال کر لیا جائے مگر اس کے مخالفین کا مؤقف ہے کہ معاشی اصلاحات اور ملازمتیں پیدا کیے بغیر یہ سیونگز یعنی فنڈ 15 سے 20 سال میں ختم ہو جائے گا۔

یہ بھی چیک کریں

History's worst recession of India

بھارت کوتاریخ کوبدترین کسادبازاری کاسامنا

لاہور:(ویب ڈیسک) بھارتی معیشت کوآزادی کےبعدسب سےبڑاجھٹکا۔ سرکاری اعدادوشمارکےمطابق مالی سال 21-2020میں بھارتی معیشت7.3فیصدسکڑی اوراس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔