کورونا وائرس
پاکستان میں
مصدقہ کیسز
(+7,539 ) 1,393,887
اموات
(+25) 29,162
صحتیاب مریض
1,272,871
فعال کیسز
91,854
Last updated: جنوری 27, 2022 - 3:57 شام (+05:00) دوسرے ممالک
Home / پاکستان کےخوبصورت سیاحتی مقامات

پاکستان کےخوبصورت سیاحتی مقامات

Explore Pakistan

اگرآپ سیاحت کےشوقین ہیں اورپاکستان کےشمالی علاقہ جات کی سیرکوجاناچاہتےہیں توآپ کویہ مضمون ضرورپڑھناچاہیے۔

پاکستان اوربیرون ملک سےآنےوالےزیادہ ترسیاحوں کےپسندیدہ علاقوں کی فہرست درج ذیل ہے۔

ہنزہ

سب سے پہلےبات کرتےہیں ہنزہ کی۔ وادی ہنزہ گلگت بلتستان میں آتی ہے۔ وادی ہنزہ دریائے ہنزہ کے شمال مغرب میں واقع ہے اور سطح سمندر سے تقریباً 2,500 میٹر بلند ہے۔ وادی کے تین حصےہیں: بالائی ہنزہ (گوجال)؛ مرکزی ہنزہ اورزیریں ہنزہ۔

وادی ہنزہ میں دیکھنےکیلئےبہت ہی خوصورت قدرتی نظارےہیں۔ وادی ہنزہ کے کچھ خوبصورت مقامات میں راکاپوشی بیس کیمپ ، دیران بیس کیمپ، ہوپرگلیشیر، پاسو اور گلمت،درہ خنجراب، عطا آباد جھیل، بٹورا گلیشیئر اور وادی نگرشامل ہیں۔

وادی نگرپاکستان کے بہترین قدرتی پرکشش مقامات میں سے ایک ہے۔ یہ وادی آپ کو دنیا کےسب سےبڑے گلیشیئرزاورمناظرکی تعریف کرنےپرمجبورکردےگی۔ ہنزہ کےلوگوں کاشمار ملک کےبہترین لوگوں میں ہوتا ہے۔

ناران کاغان
مانسہرہ ضلع کے شمال مشرق میں خوبصورت وادی ناران کاغان واقع ہے۔ یہ نہ صرف پاکستان کے لوگوں کو اپنی طرف متوجہ کرتی ہے بلکہ دنیا بھر سے بہت سے سیاح اسےدیکھنےکیلئےہرسال پاکستان کارخ کرتےہیں۔ زیریں ہمالیہ میں واقع وادی کاغان اپنے شاندار قدرتی مناظرکی وجہ سےدنیابھرمیں مشہورہے۔

یہ ہزارہ ضلع کے دلکش سیاحتی مراکز میں سے ایک ہے۔ یہاں بہت سے خوبصورت اور دلفریب مقامات ہیں، جیسے شوگراں،جرید، ناران،سیف الملوک،دودی پتسر،لولوسرجھیل،بابوسر ٹاپ، اور بہت سی دوسری جگہیں۔

سطح سمندرسےسترہ ہزارفٹ بلندناران میں روزانہ ہزاروں لوگ آتے ہیں۔ خطے کا جغرافیہ اورآب و ہوااونچے پہاڑاورجنگلات کےعلاوہ اورگھاس کے میدان اوربلندپہاڑہیں۔

سوات ویلی
وادی سوات پاکستان کے خیبر پختونخواہ کا ایک انتظامی ضلع ہے۔ یہ دریائے سوات کی بالائی وادی ہے، جو ہندوکش کے سلسلے کے ساتھ کھڑی ہے۔ سوات پاکستان کے اعلیٰ سیاحتی مقامات میں سے ایک ہے۔ سب سے بڑھ کر یہ کہ الپس اور برف سے ڈھکے پہاڑوں میں ہرے بھرے جنگلات اور سبز گھاس کے میدان ہیں جو آپ کو بہت لطف دیتے ہیں۔ پاکستان کے بیشتر علاقوں کے مقابلے سوات کی اوسط بلندی 3,220 فٹ ہے اوریہاں کی آب و ہوا ٹھنڈی اور مرطوب ہے۔

وادی سوات کو "پاکستان کامشرقی سوئٹزرلینڈ” بھی کہا جاتا ہے۔ وادی میں بہت سے پرکشش مقامات ہیں جیسے کہ مہوڈنڈ ویلی اور جھیل، قدرتی اوشو وادی اور اوشو جنگل، مالم جبہ (وادی سوات کا مشہور سکی ریزورٹ)، مدیان، سوات اور کالام ویلیز، بونیر، ڈیر، اوربہت سے دوسرے قدرتی مناظر۔

مری
موسم گرم ہو یا سرد، مری ہمیشہ پاکستان میں سیاحوں کے لیے پسندیدہ مقام ہے۔ مری صوبہ پنجاب میں برطانوی راج کا گرمائی دارالحکومت تھا۔ پاکستان بھر کے لوگ گرمیوں میں قدرتی مناظر سے لطف اندوز ہونے کے لیے وہاں جانا چاہتے ہیں۔ اس کے علاوہ موسم سرما میں ہونےوالی حیرت انگیز برف باری کانظارہ کرنےہزاروں سیاح ملکہ کوہسارکارخ کرتےہیں۔

اسی طرح بھوربن اور پتریاٹا (نیو مری) مری کے اہم سیاحتی مقامات ہیں۔ سیاحوں کے پسندیدہ مقامات میں مری کامال روڈ بھی کم اہم نہیں۔ اپنے شاندارسرسبزپہاروں،چیڑکےدرختوں اور دلکش نظاروں کے ساتھ، یہ وادی ایشیا کے مختلف حصوں سے آنے والوں کو اپنی طرف متوجہ کرتی ہے۔ مری میں ہائیکنگ کیلئےسب سے مشہور راستے ڈنگہ گلی، مسک پوری ہل، نتھیاگلی، بارہ گلی اور مال روڈ ہیں۔

سکردو
پاکستان کے انتہائی شمالی سرے پرواقع سکردوکی خاص بات یہ ہےکہ یہ علاقہ کوہ پیماؤں اور پیدل سفر کرنے والوں کا پسندیدہ مقام ہے۔ وادی خپلو میں بہت سے خوبصورت اور دلکش مقامات ہیں جو آپ کولبھاتےہیں اور اس کے متاثر کن ٹیڑھےمیڑھےراستے لمبے درختوں سے ڈھکے ہوئے ہیں۔ سب سےبڑھ کردریائے سندھ اورشانداردرختوں کےدرمیان تیرتی ہوئے شاہانہ کچورا جھیل اپنی متحرک دلکشی کےساتھ آپ کو مسحور کرنے کے لیےکافی ہے۔ سگار کے صحرا کے سرد عجائبات اور دیوسائی کی عجب خوبصورتی دونوں ہی دیکھنےسےتعلق رکھتےہیں۔

چترال
پاکستان کے شمال مغربی حصے میں واقع وادی چترال کی خوبصورتی اور دلکشی اپنی مثال آپ ہے۔ یہ پاکستان کے اعلیٰ سیاحتی مقامات میں سے ایک ہے اوراپنی دلکش قدرتی خوبصورتی اور دلکش ثقافت کے لیے جانی جاتی ہے۔ یہ صوبہ خیبرپختونخوا میں دریائے کنہار کے مغربی حصے میں واقع ہے۔
وادی چترال کوہ ہندوکش کےبڑے پہاڑی سلسلہ سے گھری ہوئی ہے اور سطح سمندر سے 7709 میٹر بلند ہے۔ یہ وادی حیرت انگیزقدرتی مناظرسےبھرپورہے۔

چترال کو کالاش ویلی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے جہاں بسنےوالی کیلاش برادری اپنی یونانی ثقافت کےانوکھےرنگ لئےاس وادی کوایک الگ ہی پہچان دیتی ہے۔ وادی کو دیکھنے کا بہترین وقت اپریل سے اکتوبرتک ہے جب آپ کو بہت سارے رنگ اور پھل ملیں گے۔ گرمیوں میں چترال وادی میں بکھرےمختلف رنگ آنےوالوں کاخیر مقدم کرتےہیں۔سردیوں میں یہ وادی برف کی سفیدچادراوڑھ لیتی ہے۔ شمالی پاکستان میں کےمشہور سیاحتی مقام کے طورجانی جانےوالی پروادی چترال کے بہت سے سیاحتی مقامات دیکھنےسےتعلق رکھتےہیں۔

آزادکشمیر
بلاشبہ پاکستان کےسیاحتی مقامات کی بات کریں توکشمیر اس فہرست میں سرفہرست ہے کیونکہ سال بھراس علاقےکاموسم حیرت انگیزہوتا ہے۔ آزاد کشمیرکی خوبصورتی کی خاص بات یہ ہےکہ آپ کواس کاتعارف کرانےضرورت محسوس نہیں ہوتی۔ منفرد طورپروادی نیلم کے نیلے موتی 12 خوبصورت وادیوں، آبشاروں اورہلکے سبز رنگ سے بھرے ہوئے ہیں۔ اس کے علاوہ، وادی شاندار علاقوں اور وسیع پہاڑوں سے بھری ہوئی ہے۔

یہ ریزورٹ کا مرکز ہے۔ ہر چیز میں بہت زیادہ خوبصورتی اوریہاں کی ثقافت ہے۔ وادی نیلم کے علاوہ، ہمیں شاردا اور تبوت اورٹولی پیر کے دیہاتوں کے شاندار مناظربھی دیکھنےکوملتےہیں۔ آزاد کشمیر کا ہر مقام اپنی الگ حیثیت رکھتا ہے۔ بنجوسا جھیل یا رتی گلی جھیل اپنی شاندارخوبصورتی سے دیکھنےوالوں کومسحورکردیتی ہے۔

نیلم ویلی
وادی نیلم ہرسال یہاں آنےوالےلاکھوں سیاحوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیتی ہے۔ وادی نیلم آزادکشمیر میں 144 کلومیٹر طویل وادی ہے۔ یہ وادی مظفرآباد(آزاد کشمیر کا دارالحکومت) کےشمال اور شمال مشرق میں واقع ہے۔ وادی نیلم کےچھوٹےسےہمالیہ پرپھیلےشاندار مناظر،دلکش نظارے،ہلچل سےبھرے گھنےسبزجنگلات میں دریائےنیلم کےپہاڑی کنارےخوبصورت دریااوردلفریب ماحول وادی کودیومالائی بنادیتےہیں۔

وادی نیلم اپنے سرسبز پودوں، چشموں، ندی نالوں، ندیوں، جھیلوں اور نظروں سےاوجھل پہاڑوں کی وجہ سے سیاحوں کے لیے انتہائی پرکشش مقامات میں سے ایک ہے۔ یہاں اٹھمقام، کٹن جاگرن، کیرن، نیلم، رتی گلی، نوری ٹاپ، شاردا، شاردا فورٹ، شاردا یونیورسٹی (برصغیر کی قدیم ترین یونیورسٹی)، آرنگ کیل، ہیملیٹ، تابوت، اور بہت کچھ ایساہےجودیکھنےسےتعلق رکھتاہے۔

وادی نیلم آپ کو سب سے خوبصورت جھیل "رتی گلی” تک بھی لے جاتی ہے۔ پیٹرک جھیل اور چوٹی وادی نیلم کے نئے پرکشش مقامات ہیں۔ آپ فوربائی فورگاڑی میں رتی گلی، پتلیان اور بابون تک پہنچ سکتے ہیں۔

About Zaheer Ahmad

Muhammad Zaheer Ahmad is a senior journalist with a career spanning over 20 years in print and electronic media. He started from the Urdu language Daily Din, proceeding to Daily Times, where he stayed as sub-editor for 2 years. In 2008, he joined broadcast journalism as a Producer at the English language Express 24/7, and later to its major subsidiary, Express-News. Zaheer currently works there as a Senior News Producer. He is also the Managing Editor of newsmakers.com.pk. Zaheer can be reached at [email protected]

یہ بھی چیک کریں

Non dairy milk for infants growth

نان ڈیری دودھ اوربچوں کی نشوونما

ترجمہ و تحقیق : محمدظہیر ۔۔ ہر کھانے کے ساتھ دودھ کا ایک گلاس پیناہم …