News Makers

تازہ ترین

کورونا وائرس پاکستان میں مصدقہ کیسز
374173
  • اموات 7662
  • سندھ 162227
  • پنجاب 114010
  • بلوچستان 16744
  • خیبرپختونخوا 44097
  • اسلام آباد 26569
  • گلگت بلتستان 4526
  • آزاد کشمیر 6000

 

جسٹس قاضی فائزعیسیٰ نےنظرثانی درخواست میں اہم مطالبہ کردیا

جسٹس قاضی فائزعیسیٰ نےنظرثانی درخواست میں اہم مطالبہ کردیا
اپ لوڈ :- ہفتہ 05 دسمبر 2020
ٹوٹل ریڈز :- 55

ویب ڈیسک ۔۔ سپریم کورٹ کےجسٹس قاضی فائز عیسیٰ نےاپنےخلاف صدارتی ریفرنس کے فیصلے پراضافی نظر ثانی درخواست دائر کر دی ہے۔ درخواست میں موقف اختیارکیا گیا ہےکہ سرکاری عہدے داروں نےمیرےاوراہل خانہ کےخلاف پروپیگنڈہ مہم چلائی، ایف بی آر کی رپورٹ نہ مجھے نہ اہلیہ کو فراہم کی گئی، ایف بی آررپورٹ بھی ریفرنس کی مانند گمراہ کن پروپیگنڈہ کےلیے میڈیا کو لیک کی گئی، ایف بی آر کی رپورٹ سےمیں اوراہلیہ متاثرہوسکتےہیں۔
 
ان کا کہنا تھا کہ 19 جون 2020کے فیصلے کے پیرا گراف 2 تا 11 پر نظر ثانی کر کے واپس لیا جائے، جون کے فیصلہ سے عدلیہ کی آزادی کوایگزیکٹوکےہاتھ میں دےدیا گیا،اورعدلیہ کی آزادی ایگزیکٹوکےہاتھ میں دیناآئین کےخلاف ہے۔
 
انہوں نے اپنی درخواست میں مزید کہا کہ فیض آباد دھرنا کیس کے بعد ایم کیو ایم، پی ٹی آئی نے درخواستوں میں عہدے سے ہٹانے کا مطالبہ کیا، سابق چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کا نجی طور پر ریفرنس کا بتانے کا مقصد استعفیٰ لینا تھا، سپریم کورٹ نے سپریم جوڈیشل کونسل کے تعصب بارے درخواست کے دوسرے حصے کی سماعت نہیں کی۔
 
جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کا کہنا تھا کہ عمران خان کی حکومت کے کئی عہدے داروں کی بیرون ملک جائیدادیں ہیں، علم نہیں کہ انہوں نے جائیدادوں کو پاکستان میں اپنے ٹیکس ریٹرنز میں ظاہر کیا یا نہیں، ان عہدیداروں میں سید ذوالفقار عباس بخاری، شہزاد اکبر، یار محمد رند، ندیم بابر، عاصم سلیم باجوہ، شہباز گل شامل ہیں، فیصل واوڈا اور عثمان ڈار شامل ہیں۔
 
انہوں نے اپنی درخواست میں بتایا کہ ذوالفقار عباس بخاری کی 45 ولنگٹن روڈ لندن میں فلیٹ نمبر 3 جائیداد ہے، یار محمد رند کی سپرنگ ریذیڈنشل ولا اور انٹرنیشنل سٹی دبئی میں جائیداد ہے، ندیم بابر کا ہیوسٹن امریکا میں گھر ہے، شہباز گل کا امریکا میں گھر ہے۔
 
ان کا یہ بھی بتانا تھا کہ عاصم سیلم باجوہ کی اہلیہ کی امریکا میں 13 کمرشل اور 5 رہائشی جائیدادیں ہیں، فیصل واوڈا کی بیرون ملک 9 جائیدادیں ہیں، فیصل واوڈا کی لندن میں 7، ملائشیا اور دبئی میں ایک ایک جائیداد ہے جب کہ عثمان ڈار کی برطانیہ کے شہر برمنگھم میں جائیداد ہے، شہزاد اکبر کی لندن میں جائیداد ہے اور ان کی اہلیہ کا اسپین میں ایک فلیٹ ہے۔
 
اپنی درخواست میں قاضی فائز عیسیٰ نے مطالبہ کیا کہ جسٹس یحیٰی آفریدی کے فیصلے کی روشنی میں میری درخواست کو قابل سماعت قرار دیا جائے، جسٹس مقبول باقر، جسٹس منصور علی شاہ اور جسٹس یحیٰی آفریدی کو بھی بینچ کا حصہ بنایا جائے، اور درخواست کی سماعت ٹی وی پر لائیو نشر کرنے کا حکم دیا جائے۔

Copyright © 2018 News Makers. All rights reserved.