News Makers

تازہ ترین

کورونا وائرس پاکستان میں مصدقہ کیسز
374173
  • اموات 7662
  • سندھ 162227
  • پنجاب 114010
  • بلوچستان 16744
  • خیبرپختونخوا 44097
  • اسلام آباد 26569
  • گلگت بلتستان 4526
  • آزاد کشمیر 6000

 

تین نجی کمپنیاں پٹرول بحران کی ذمہ دارقرار ، تحقیقاتی رپورٹ

تین نجی کمپنیاں پٹرول بحران کی ذمہ دارقرار ، تحقیقاتی رپورٹ
اپ لوڈ :- منگل 16 جون 2020
ٹوٹل ریڈز :- 109

 ویب ڈیسک ، مانیٹرنگ ڈیسک
 
گزشتہ دنوں ملک میں پیداہونےوالےپیٹرول بحران کی تحقیقات کیلئےبنائی جانےوالی وزارت پیٹرولیم کی تحقیقاتی کمیٹی نےاپنی ابتدائی رپورٹ میں نجی تیل کمپنیوں کوبحران کاذمہ دارقراردیاہے۔ 
 
ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ کےمطابق بحران کےدنوں میں پی ایس اوکےآئل ٹرمینلز 24 گھنٹے کام کرتے رہے۔ ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ وزارت پیٹرولیم کوبھجوادی گئی ہے۔ رپورٹ کے مطابق بحران سے قبل پی ایس او کا مارکیٹ شیئر 32 سے36 فیصد تھا جو بحران میں تیل کی سپلائی کے باعث 54 فیصد ہوگیا۔
 
رپورٹ کے مطابق جن تین کمپنیز پر مقدمات ہوئے وہ مارکیٹ شیئرزیادہ لے رہی تھیں کیونکہ ان کے مارکیٹ شیئرز بحران میں کم ہوگئے تھے۔ رپورٹ کےمطابق ایک نجی کمپنی کے پاس پورٹ قاسم اورکیماڑی آئل فیلڈ میں 54 ہزار میٹرک ٹن تیل تھا جس کا پیٹرول مارکیٹ شیئر  سےنوسے14 فیصد کے درمیان تھا مگر پیٹرول سپلائی نہ کرنے پر اس کمپنی کا شیئر 11.2 فیصد تک گر گیاحالانکہ مارکیٹ شیئر بحران سے پہلےاسی کمپنی کا ڈیزل 10.7 فیصد تھا تاہم بحران میں اس نجی کمپنی کا ڈیزل شیئر 8.3 فیصد تک گر گیا ہے۔
 
 دوسری کمپنی کے پاس کیماڑی اور پورٹ قاسم آئل فیلڈز میں 43 ہزار میٹرک ٹن پیٹرول تھا اس کمپنی کا مارکیٹ شیئر بحران سے پہلےدس اعشاریہ تین  فیصد تھا لیکن بحران میں 7.6 فیصد ہوگیا تاہم اس کمپنی کا ڈیزل شیئر بحران میں 8.6 فیصد سے 5.7 فیصد رہ گیا ہے۔
 
تحقیقاتی رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہےکہ تیسری کمپنی نے 27 مئی کو 3 ہزار میٹرک ٹن پیٹرول درآمد کیا تھا اس کمپنی نے 27 مئی سے 8 جون تک 280 میٹرک ٹن پٹرول سپلائی کیا جب کہ 6 جون کو دوبارہ 5 ہزار میٹرک ٹن پٹرول درآمد کیا مگر مارکیٹس میں فوری نہیں بھیجا تاہم بحران میں کمپنی کا مارکیٹ شیئر 2.3 فیصد سے 0.6 فیصد رہ گیاہے۔
 
رپورٹ میں بتایا گیاہے کہ یہ تینوں تیل کمپنیاں ذخیرہ اندوزی اور بلیک مارکیٹنگ میں ملوث ہیں، ساتھ ہی ایک اور بڑی تیل کمپنی کا مارکیٹ شیئر بحران میں 10.2 فیصدسے 6.1 فیصد رہ گیا ہےاور اسی طرح دیگر تیل کمپنیوں کے مارکیٹ شیئر میں بھی نمایاں کمی ہوئی۔
 
رپورٹ میں کمیٹی نےتمام کمپنیوں کے خلاف سخت کارروائی کی سفارش کی ہے۔
 
کمیٹی نے سفارش کی کہ ان کمپنیوں کو طے کردہ معیار پر پورا نہ اترنے پرشوکاز دیا جائے اور ایک ماہ میں ان کی کارکردگی بہتر نہیں ہوتی تو لائسنس معطل کیا جائے۔
 

Copyright © 2018 News Makers. All rights reserved.