News Makers

تازہ ترین

کورونا وائرس پاکستان میں مصدقہ کیسز
374173
  • اموات 7662
  • سندھ 162227
  • پنجاب 114010
  • بلوچستان 16744
  • خیبرپختونخوا 44097
  • اسلام آباد 26569
  • گلگت بلتستان 4526
  • آزاد کشمیر 6000

 

حکومت سےمذاکرات : مولانانےنئی اورانوکھی شرائط پیش کردیں

حکومت سےمذاکرات : مولانانےنئی اورانوکھی شرائط پیش کردیں
اپ لوڈ :- منگل 22 اکتوبر 2019
ٹوٹل ریڈز :- 276

مولانافضل الرحمان کےآزادی مارچ کےاعلان نےحکومتی ایوانوں میں کھلبلی مچادی ہے۔ حکمران بظاہرپرسکون لیکن اندربےچینی اوربےسکونی کاایک طوفان بپاہے۔ وزراکےغصیلےبیانات اوردھمکیاں توکم ازکم اسی جانب اشارہ کرتے ہیں ۔ حکومت کی پریشانی اس بات سےبھی عیاں ہےکہ کچھ عرصہ پہلےتک گلاپھاڑپھاڑکراپوزیشن کودھرنےکاچیلنج دینےاورانہیں کنٹینرکےساتھ ساتھ کھاناتک دینےکی آفرکرنےوالےوزیراعظم عمران خان آزادی مارچ اوردھرناروکنےکی منصوبہ بندی میں مصروف ہیں ۔ انہوں نےوزراکواس حوالےسےٹاسک بھی سونپ دئیےہیں ۔اسلام آبادکےداخلی راستوں پرخندقیں کھودنے، موٹروےاورجی ٹی روڈبند کرنےاورآخری آپشن کےطورپرمولاناکی گرفتاری تک کی منصوبہ بندی کی جاچکی ہے۔
 گونگلووں سےمٹی جھاڑنےکیلئےوزیردفاع پرویزخٹک کی سربراہی میں ایک عدداعلیٰ سطحی کمیٹی بھی قائم کردی گئی ہےجومولاناسےمذاکرات کرکےانہیں مارچ نہ کرنےپرقائل کرنےکی کوشش کرےگی ۔
 مولانافضل الرحمان نےالبتہ مذاکرات کی ہنڈیاچولہےپرچڑھنےسےپہلےہی یہ کہہ کرپھوڑڈالی کہ مذاکرات کرنےہیں تووزیراعظم کااستعفیٰ ساتھ لیکرآئیں۔  ظاہرہےحکومت نےاس شرط کومستردکردیااورکہاکہ مولاناجائزمطالبات پیش کریں ، حکومت سنجیدگی سےغورکرےگی ۔ حکومت مشترکہ دوستوں کےتوسط سےجےیوآئی کی قیادت کےساتھ رابطےبحال کرنےکی کوشش کررہی ہے۔
  انتہائی باخبرذرائع کےمطابق حکومت سےکسی بھی قسم کی بات چیت سےپہلےمولانافضل الرحمان نےبحالی اعتماد(سی بی ایمز)کی خاطرحکومت کوچندشرائط پرمشتمل ایک خط بھجوایاہے۔ اس خط کےکچھ مندرجات ہمارےہاتھ بھی لگےہیں ۔۔ آپ بھی پڑھیں اورانجوائےکریں ۔۔
 محترم جناب پرویزخٹک صاحب،
سربراہ حکومتی مذاکراتی کمیٹی
اسلام وعلیکم ورحمتہ للہ وربرکاتہ
خٹک صاحب ، میرےعلم میں لایاگیاہےکہ حکومت نےآزادی مارچ رکوانےکیلئےآپ کی سربراہی میں ایک مذاکراتی کمیٹی بنائی ہے۔ جےیوآئی ف کی مجلس شوریٰ اپنےمتفقہ فیصلےمیں حکومت کےساتھ مذاکرات سےانکارکافیصلہ کرچکی ہے۔ ہماری جماعت مذاکرات سےپہلےعمران خان کےوزارت عظمیٰ کےمنصب سےمستعفی ہونےکی شرط رکھ چکی ہےلیکن حکومت ہماری مندرجہ ذیل شرائط کوپوراکردےتومذاکرات کیلئےوزیراعظم کےاستعفےکی شرط کوواپس لےلیاجائےگا۔
:مذاکرات شروع کرنےکیلئےپہلی اورسب سےاہم شرط
  عمران خان جوریاست مدینہ کےحوالےسےبڑی باتیں کرتےہیں، یقیناًیہ جانتےہونگےکہ ریاست مدینہ کےبنانےوالےسب حضرات باریش تھے، اس لئےعمران خان ریاست مدینہ سےاپنی سچی وابستگی کاثبوت دینےکیلئےخودبھی شرعی داڑھی رکھیں اورکابینہ اراکین کوبھی ایساکرنےکاحکم دیں۔
فردوس عاشق اعوان چونکہ خاتون ہیں ، داڑھی نہیں رکھ سکتیں ، اس لئےوہ برقع بمعہ پورےچہرےکانقاب پہنیں گی تاکہ سیاسی مخالفین شعلہ بیانی کےساتھ ساتھ محترمہ کےچہرےکی ہیبتناکی سےبھی محفوظ رہ سکیں ۔
اس کےعلاوہ عمران خان اوروفاقی کابینہ کےارکان باقاعدگی سےنمازپنجگانہ باجماعت اداکریں گےاورطہارت وپاکیزگی کی خاطرہروزیرکےباتھ روم میں ایک عددلوٹا رکھاجائےگا۔
وزراایک ہفتےتک نہ صرف مولانافضل الرحمان اورانکےدھرنےبارےاپنی زبان بندرکھیں گےبلکہ ان کی سیاسی وجمہوری خدمات پرسیرحاصل گفتگوبھی کریں گے۔
اورعمران خان ۔۔ وہ جلسےجلوسوں میں ڈیزل ڈیزل کےنعرےلگوانےکی بجائےکابینہ کےاگلےاجلاس کی صدارت ڈیزل کےٹیگ والی شرٹ پہن کرکریں گے۔ ہماری ان شرائط پردل وجان سےعملدرآمدکرنےکی یقین دہانی کرائی جائےتوبات چیت کیلئےہمارےدروازےاوردل دونوں کھلےہیں ۔ امیدہےآپ ہمیں مایوس نہیں کرینگے۔ 
 وماعلیناالالبلاغ
 
نوٹ: (دوستویہ خط اوراس میں لکھی گئی شرائط فرضی ہیں ۔ سیاسی گرماگرمی کےماحول میں اس کوشش کامقصدآپکےچہروں پرمسکراہٹ بکھیرناتھا)۔   
 
 
 

Muhammad Zaheer

The author is a journalist. He is currently working for a news channel.

Muhammad Zaheer مزید تحریریں

Muhammad Zaheer

Copyright © 2018 News Makers. All rights reserved.