News Makers

پشاوردھماکا :-دیرکالونی پشاورکےمدرسےمیں دھماکا،7افرادشہید،112سےزائدزخمی
پشاوردھماکا :-دھماکاٹائم ڈیوائس کےذریعےکیاگیا ، پولیس حکام
پشاوردھماکا :-دھماکےکےوقت مدرسےکےہال میں ایک ہزارسےزائدافرادہال میں موجودتھے
پشاوردھماکا :-دھماکاخیزموادمیں چھرےبھی تھے،یہ موادایک بیگ میں رکھاگیاتھا ، اےآئی جی
پشاوردھماکا :-دھماکاکسی بڑےمنظم گروپ کی کارروائی لگتاہے ، اےآئی جی
پشاوردھماکا :-دھماکےکی جتنی مذمت کی جائےکم ہے ، وفاقی وزیراطلاعات شبلی فراز
پشاوردھماکا :-دھماکےمیں بیرونی ہاتھ کوخارج ازامکان قرارنہیں دیاجاسکتا ، کامران بنگش
پشاوردھماکا :-پشاور دھماکے نے انتہائی رنجیدہ کردیا ہے: مریم نواز
پشاوردھماکا :-جن ماؤں کی گودیں اجڑ گئیں، انکے دُکھ کا تصور اور ازالہ ممکن نہیں،مریم نواز
شہبازشریف :-شہباز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کی درخواست خارج
شہبازشریف :-نیب کی درخواست پرسپریم کورٹ کے2رکنی بنچ نےسماعت کی
شہبازشریف :-مشکوک ٹرانزیکشنز کرپشن کے زمرے میں نہیں آتیں،سپریم کورٹ
شہبازشریف :-جسٹس فائز عیسیٰ کیس میں اینٹی منی لانڈرنگ قوانین کی تشریح کی جاچکی،جسٹس منیب اختر

تازہ ترین

کورونا وائرس پاکستان میں مصدقہ کیسز
320463
  • اموات 6601
  • سندھ 140756
  • پنجاب 101014
  • بلوچستان 15577
  • خیبرپختونخوا 38427
  • اسلام آباد 17526
  • گلگت بلتستان 3965
  • آزاد کشمیر 3198

 

جہانگیرترین کےمرزاشہزاداکبرپرسنگین الزامات

جہانگیرترین کےمرزاشہزاداکبرپرسنگین الزامات
اپ لوڈ :- بدھ 14 اکتوبر 2020
ٹوٹل ریڈز :- 51

ویب ڈیسک ۔۔ تحریک انصاف کےرہنماجہانگیرترین کےوزیراعظم کےمشیرشہزاداکبرپرسنگین الزامات ۔ کہاشہزاداکبراوروزیراعظم ہاوس میں بیٹھےکچھ دیگرلوگوں پرمشتمل ایک گروپ ان کےخاندان اورکاروبارکی خفیہ نگرانی کررہاہے۔ 
 
روزنامہ جنگ کےلندن میں نمائندےمرتضیٰ علی شاہ کی بائی لائن سٹوری کےمطابق دو سرکاری محکمے، جو کسی دفاعی تنظیم یا مسلح افواج سے منسلک نہیں، جہانگیر ترین ، ان کے کنبہ کے افراد اور ان کے کاروباری مفادات کی نگرانی کئی ہفتوں تک کرتے رہے۔ خبرکےمطابق ایک محکمہ کو تفتیش کا حکم دیا گیا اور دوسرے کو نگرانی کی سرگرمیاں انجام دینے کا اختیار حاصل ہے۔
 
ذرائع کاحوالہ دیتےہوئےخبرمیں انکشاف کیاگیاہےکہ اسلام آباد اور لودھراں میں جہانگیر ترین کی رہائش گاہوں کے ساتھ ساتھ ان کی شوگر ملوں اور دیگر کاروباری مفادات کی نگرانی کی گئی۔
 
ذرائع کے مطابق سیاست دانوں ، تاجروں اور دوستوں سے ملاقاتوں سمیت ترین کی سرگرمیوں کی نگرانی کی گئی اور ان کے فون کالز ٹیپ کیے گئے جبکہ گھر کے تمام افراد کی فون کالز ریکارڈ کی گئیں۔
 
جب جہانگیر ترین سے ان کے اہل خانہ اور ان کے کاروبار کی نگرانی کے سلسلے میں سوالات پوچھے گئے تو وہ تفصیلات میں نہیں گئے لیکن انہوں نے اپنے اہل خانہ کی نگرانی سے انکار نہیں کیا۔تاہم جہانگیر ترین نے الزام لگایا کہ انہیں بلا وجہ نشانہ بنایا گیا اور انھیں بدنام کیا گیا۔
 
انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم ہاؤس میں ایک گروپ نے ان کے اور وزیر اعظم عمران خان کے مابین غلط فہمی پیدا کرنے کے لئے سب کچھ کیا ہے۔ اس سے پہلے ترین وزیر اعظم کے پرنسپل سکریٹری اعظم خان پر ان کے خلاف غلط معلومات اور ہراساں کرنے کی مہم کی قیادت کرنے کا الزام عائد کرچکے ہیں۔
 
ادھرشہزاداکبرنےجہانگیرترین کےالزامات سےلاتعلقی کااظہارکرتےہوئےانہیں اپنےلئےخبرقراردیاہے۔ 

ٹیگز

Copyright © 2018 News Makers. All rights reserved.