News Makers

عسکری قیادت :-ملکی سیاسی معاملات سےکوئی لینادینانہیں ، عسکری قیادت
عسکری قیادت :-عسکری قیادت نےہمیشہ خودکوسیاسی معاملات سےدوررکھنےپرزوردیا
عسکری قیادت :-الیکشن ریفارمز ، نیب و سیاسی معاملات سےکوئی لینادینانہیں ، عسکری قیادت
عسکری قیادت :-گزشتہ روزشیخ رشیدنےپارلیمانی لیڈرزکی عسکری قیادت سےملاقات کی تصدیق کی تھی
عسکری قیادت :-الیکشن ریفارمز، نیب و سیاسی معاملات سےمتعلق تمام کام سیاسی قیادت نےکرنےہیں،عسکری قیادت

تازہ ترین

کورونا وائرس پاکستان میں مصدقہ کیسز
303089
  • اموات 6393
  • سندھ 132591
  • پنجاب 97946
  • بلوچستان 13690
  • خیبرپختونخوا 37140
  • اسلام آباد 15984
  • گلگت بلتستان 3297
  • آزاد کشمیر 2441

 

شہبازشریف اوربلاول بھٹوملاقات ۔۔ اندرخانےکیاباتیں ہوئیں

شہبازشریف اوربلاول بھٹوملاقات ۔۔ اندرخانےکیاباتیں ہوئیں
اپ لوڈ :- منگل 01 اکتوبر 2019
ٹوٹل ریڈز :- 175

مانیٹرنگ ڈیسک ۔۔
 
مسلم لیگ ن کےصدرشہبازشریف اورپیپلزپارٹی کےچیئرمین بلاول بھٹوکےدرمیان ہونےوالی اہم ملاقات کی اندرونی کہانی سامنےآگئی ہے ، جس کےمطابق شہبازشریف بلاول بھٹوکومولانافضل الرحمان کےدھرنےمیں عملی طورپرشرکت پرآمادہ کرتےرہےجبکہ بلاول بھٹودھرنےمیں مشروط شرکت پرآمادہ دکھائی دئیے۔
 
 ذرائع کےمطابق شہبازشریف کاکہناتھاکہ مولانافضل الرحمان کےدھرنےمیں اگرمسلم لیگ ن اورپیپلزپارٹی بھی شریک ہوجائیں توحکومت کی رخصتی سمیت دیگرآپشن کاحصول آسان بنایاجاسکتاہے۔ دوسری جانب بلاول بھٹوجن کادھرنےکےبارےمیں موقف واضح طورپرسامنےآچکاہے،شہبازشریف سےکہاکہ دھرنےمیں شرکت کیلئےکوئی درمیانی  راستہ نکالاجائےتووہ اپنےپہلےفیصلےپرنظرثانی کرسکتےہیں ۔ یادرہےکہ بلاول بھٹوکہہ چکےہیں کہ دھرنوں کی سیاست پیپلزپارٹی کاطرزسیاست نہیں اورنہ ہی پیپلزپارٹی کسی مذہبی نعرےکےبینرتلےدھرنےمیں شریک ہوگی۔ 
 
یادرہےکہ مولانافضل الرحمان اگلےماہ یعنی اکتوبرمیں اسلام آباددھرنےکااعلان کرچکےہیں جبکہ مسلم لیگ ن مولاناسےدھرنےکونومبرتک موخرکرنےکی درخواست کرچکی ہےکیونکہ ن لیگ کےمطابق دھرنےمیں شرکت کیلئےاس کی تیاری مکمل نہیں ۔ 
 
 ملاقات کےبعدمیڈیاسےبات کرتےہوئےاحسن اقبال کاکہناتھاکہ اس حکومت کوگھربھیجنےپرتمام جماعتیں متفق ہیں ۔ ان کاکہناتھاکہ اس بات پراتفاق کیاگیاہےکہ جےیوآئی ایف کےساتھ ملکراس حکومت کےخلاف تمام جماعتوں کومشترکہ لائحہ عمل اپناناچاہیے۔ احسن اقبال نےبتایاکہ اس سلسلےمیں مسلم لیگ ن اورپیپلزپارٹی کی قیادت مولانا فضل الرحمان سےملاقات کریں گے ۔ انہوں نےاس بات کااعادہ کیاکہ اس حکومت سےعوام کی جان چھڑواکررہیں گےاوراس کاواحدحل منصفانہ الیکشن ہیں ۔ 
 
اس موقع پرمیڈیاسےبات کرتےہوئےشیری رحمان کاکہناتھاکہ عوام اورملک دونوں بہت ہی مشکل دورسےگزررہےہیں ۔ ایک سوال کےجواب میں انہوں نےکہاکہ اپوزیشن چاہتی ہےکہ ایک ساتھ رہےتاکہ حکومت کوٹف ٹائم دےسکیں ۔ 
 
یہ بھی پڑھیں ۔۔
 

Copyright © 2018 News Makers. All rights reserved.