News Makers

پی آئی اے :-یورپ کےبعدامریکانےبھی پی آئی اےکی پروازوں پرپابندی لگادی
پی آئی اے :-جعلی لائسنس کامعاملہ سامنےآنےکےبعدامریکی ٹرانسپورٹ اتھارٹی کاایکشن
پی آئی اے :-وزیرہوابازی غلام سرورخان نےپائلٹس کےجعلی لائسنس کامعاملہ اٹھایاتھا

تازہ ترین

کورونا وائرس پاکستان میں مصدقہ کیسز
246351
  • اموات 5123
  • سندھ 102368
  • پنجاب 85991
  • بلوچستان 11128
  • خیبرپختونخوا 29775
  • اسلام آباد 13927
  • گلگت بلتستان 1630
  • آزاد کشمیر 1532

 

آئی ایم ایف جو کہتاہے،چپ کرکےوہ کرتےجاو ۔۔

آئی ایم ایف جو کہتاہے،چپ کرکےوہ کرتےجاو ۔۔
اپ لوڈ :- جمعرات 13 فروری 2020
ٹوٹل ریڈز :- 154

(مہمان آرٹیکل)
 
ماہرین معیشت نے ایک سال پہلےہی قوم کواس تباہی سےخبردارکردیاتھاجوتحریک انصاف حکومت اس ملک میں لارہی تھی ۔
کمزورقوت فیصلہ ، نااہلیت اور سب سےبڑھ کراہم ترین معاملات پرلیٹ فیصلوں نےمعاملات بدسےبدترین بنادیاہے ۔
مسلسل دس سال تک ترقی کےراستےپرگامزن معیشت کوتباہی کےدہانےپرلاکھڑاکیاگیاہے۔ آئی ایم ایف کےپاس جانےمیں دس ماہ کی تاخیرمہلک ثابت ہوئی کیونکہ اگرحکومت بنانےکےفورابعدآئی ایم ایف سےرجوع کرلیاجاتاتوکڑی شرائط سےبچاجاسکتاتھا۔
معیشت کوتباہ کرنےکےبعداس حکومت نےحقیقی معیشت کوتباہ کردیاہے۔ حکومت کےلاکھ دعووں کےباجودوہ تمام عوامل جن سےایک عام آدمی کی زندگی میں بہتری آتی ہےانتہائی خراب حالت میں ہیں اوران کےمزیدخراب ہونےکاخدشہ برقرارہے۔
مہنگائی کی شرح دس سال کی بلند ترین سطح یعنی 14.5فیصدپرپہنچ چکی ہے اورستم بالائےستم کی فوڈانفلیشن یعنی کھانےپینےکی اشیا25فیصدتک مہنگی ہوچکی ہیں ۔ ان حالات میں تنخواہ دارطبقےکیلئےزندگی کی بنیادی ضرورتوں کوپوراکرناجوئےشیرلانےکےمترادف ہے۔ مرتاکیانہ کرتاکےمصداق عام شہری اپنی انتہائی بنیادی ضرورتوں پرکٹ لگارہےہیں تاکہ مہینہ بھرکسی کےآگےہاتھ نہ پھیلانےپڑیں ۔ دو ، دو نوکریاں سفیدپوش تنخواہ دارطبقےکی مجبوری بنتی جارہی ہیں ۔
یہ بھی پڑھیں۔۔
مینوفیکچرنگ انڈسٹری گزشتہ آٹھ ماہ سےسکڑتی جارہی ہے، آٹوموبائل صنعت میں بھی کارخانےبندہورہےہیں جبکہ زراعت کاحال تونہ ہی پوچھیں ۔ معروف ماہرمعاشیات ڈاکٹرحفیظ پاشاکےمطابق اس مالی سال میں گروتھ ریٹ 1.2فیصدرہےگاجبکہ پی ٹی آئی حکومت کےدوسال کےاندربائیس لاکھ افرادبیروزگارہوچکےہوں گے۔
یہ بھی پڑھیں۔۔
آٹے،چینی اورٹماٹرکےبحران اقتصادی بدانتظامی کی بدترین مثالیں ہیں اورایسےمزیدبحران مستقبل میں آنےکےقوی امکانات ہیں ۔
شرح سودگزشتہ دس سال کی بلندترین سطح پرپہنچ چکاہے، بجلی اورگیس کی بلوں کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ کیاجارہاہے، جبکہ اقتصادی پیداوارکم ہوتی جارہی ہے۔ حکومت کرنٹ اکاونٹ خسارےمیں کمی کاجشن اس لئےنہیں مناسکتی کیونکہ جب ملک میں اقتصادی سرگرمیاں ہی ماندپڑجائیں گی توکرنٹ اکاونٹ خسارہ توخودبخودکم ہوتاجائےگا کیونکہ جب ملک میں امپورٹ کم ہوجائیں گی توکرنٹ اکاونٹ خسارہ بھی کم ہوجائےگالیکن ایساہونےسےمحصولات میں بھی خاطرخواہ کمی واقع ہوگی ۔
یہ بھی پڑھیں۔۔
تحریک انصاف کی اپنی کوئی اکنامک پالیسی نہیں ۔ اس کی اقتصادی پالیسی آئی ایم ایف سےکئےگئےمعاہدےہیں جنہیں آٹوپائلٹ پرلگاکرچلایاجارہاہے۔ مطلب چپ کرکےبیٹھواورجوآئی ایم ایف کہتاہےوہ کرتےجاو۔
یوں محسوس ہوتاہےکہ جیسےحکومت کولوگوں کی مشکلات کابالکل بھی احساس نہیں ۔ سمجھ نہیں آتاکہ غربت کی لائن سےنیچےجاتےلوگ زندہ کیسےرہیں گے؟ جوحکومت عوام سےزیادہ کسی اورکوجوابدہ ہو،اسےعوام کااحساس ہوبھی کیسےسکتاہے۔
نوٹ: یہ آرٹیکل معروف ماہرمعاشیات اکبرایس زیدی نےڈان کیلئےلکھا ۔ ہم نےپوری ایمانداری سےاس کااردوترجمہ آپ کےسامنےپیش کیاہےتاکہ زیادہ سےزیادہ لوگ یہ جان سکیں کہ ملکی معیشت کی اس وقت کیاحالت ہے۔ 
 

Copyright © 2018 News Makers. All rights reserved.