News Makers

شہبازشریف :-اپوزیشن لیڈرشہبازشریف کی جانب سےلیگی کارکنوں پرپولیس تشددکی مذمت
شہبازشریف :-لیگی کارکنوں پر تشددنیب نیازی گٹھ جوڑ کی بدترین مثال ہے ، شہبازشریف
بلاول بھٹو :-پی پی چیئرمین بلاول بھٹوکی جانب سے لیگی کارکنوں پرپولیس تشدد کی مذمت
نوازشریف :-نوازشریف کا مریم نوازکوٹیلی فون ، خیریت دریافت کی
نوازشریف :-نوازشریف کی پولیس تشددسےزخمی کارکنوں کی عیادت کی ہدایت

تازہ ترین

کورونا وائرس پاکستان میں مصدقہ کیسز
285191
  • اموات 6112
  • سندھ 124127
  • پنجاب 94586
  • بلوچستان 11921
  • خیبرپختونخوا 34755
  • اسلام آباد 15281
  • گلگت بلتستان 2371
  • آزاد کشمیر 2150

 

" ڈان کوپکڑنامشکل ہی نہیں ناممکن ہے "

اپ لوڈ :- منگل 03 مارچ 2020
ٹوٹل ریڈز :- 184

وفاقی حکومت نےپنجاب حکومت کی سفارش پرلندن میں زیر علاج سابق وزیر اعظم نوازشریف کوپاکستان بھجوانےکیلئےبرطانوی حکومت کوخط لکھ دیاہے۔
 
ذرائع کے مطابق  یہ خط پنجاب حکومت کی سفارش پر وزارت خارجہ کے ذریعے برطانوی حکام کولکھا گیا ہے جس کےمتن میں کہاگیاہےکہ نواز شریف سزا یافتہ مجرم ہیں لہٰذا انہیں واپس بھجوایا جائے۔
 
سابق وزیراعظم نواز شریف 19 نومبر 2019 کولاہورسےعلاج کیلئےلندن گئےجہاں ان کامختلف بیماریوں کاعلاج کیا جارہا ہے اور جلد ہی دل کا آپریشن کیا جائے گا۔
 
25 فروری 2020 کو پنجاب حکومت نے نوازشریف کی ضمانت میں توسیع کی درخواست مسترد کردی تھی جس کے بعد صوبائی حکومت نے وفاق کو کارروائی کے لیے خط لکھا تھا۔
 
حکومت نےاتنی جلدبازی میں خط کیوں لکھا؟
 
 
 یہ سوال ہرپاکستانی کےذہن میں کلبلارہاہےکہ آخربیٹھےبٹھائےکیامصیبت آن پڑی کہ حکومت سارےکام چھوڑچھاڑکرنوازشریف کوپاکستان واپس لانے پرتل گئی ؟ میرےنزدیک اس کی دووجوہات ہیں ۔ ایک تویہ کہ لاہورسےبیماری کی حالت میں جانےوالےنوازشریف لندن کی سڑکوں پربظاہرہشاش بشاش اورچلتےپھرتےاس حکومت کوایک آنکھ نہیں بھارہےاورانہیں لگتاہےکہ حکومت کےساتھ ہاتھ ہوگیا۔ وزیراعظم کی معاون خصوصی فردوس عاشق خودیہ بیان دےچکی ہیں کہ نوازشریف کی لندن روانگی دراصل ایک فکس میچ تھاجومیڈیاکےساتھ ملکرکھیلاگیا۔ اب اگرحکومتی خط کےجواب میں برطانیہ نوازشریف کوڈی پورٹ کردیتاہےتوحکومت اپنےساتھ ہونےوالے"دھوکے"کابدلہ لینےمیں کامیاب ہوجائےگی ۔ 
 
 
 دوسری وجہ جومجھےسمجھ آتی ہےوہ یہ ہےکہ معاشی محاذپرپےدرپےناکامیوں کےبعدتحریک انصاف کااحتساب کابیانیہ بھی درحقیقت بری طرح پٹ چکاہےاوراس بیانئیےکےپٹنےمیں نوازشریف کی بیرون ملک روانگی اورلیگی رہنماوں کی ایک کےبعدایک ضمانتوں نےکلیدی کرداراداکیاہے۔ ان حالات میں اگرتویہ حکومت واقعی میاں نوازشریف کوپاکستان واپس لانےمیں کامیابی ہوجاتی ہےتویہ ایک بہت بڑی فیس سیونگ ہوگی لیکن یہ اتناآسان نہیں جتنایہ حکومت میڈیاکےذریعےتاثردینےکی کوشش کررہی ہے۔ نوازشریف کی وطن واپسی میں لندن میں ان کےمعالج کی رپورٹ سب سےاہم دستاویزہوگی اوراگرڈاکٹرنےرپورٹ میں لکھ دیاکہ نوازشریف سفرکےقابل نہیں اوریہ کہ ایساکرنےسےان کی جان کوخطرہ لاحق ہوسکتاہےتویہ حکومت اوراس کےبڑھک بازوزراجان لیں کہ "ڈان کوپکڑنامشکل ہی نہیں ناممکن ہے"۔
 
 
آخری بات اگریہ حکومت میاں نوازشریف کوبرطانیہ سےزبردستی واپس لانےمیں کامیاب ہوجاتی ہےتویہ پرسکون پانی میں پتھرمارنےجیساہوگا۔ موجودہ حالات میں جب عوام مہنگائی کےہاتھوں پہلےہی تنگ ہیں اگرمسلم لیگ ن نےاحتجاجی مظاہروں کی کال دےدی اورمولانااورپیپلزپارٹی بھی ساتھ مل گئےتوگرینڈاپوزیشن کےمقابلےمیں چندکمزورسہاروں پرکھڑی حکومت زیادہ دن ٹھہرنہیں سکےگی ۔
 

Muhammad Zaheer

The author is a journalist. He is currently working for a news channel.

Muhammad Zaheer مزید تحریریں

Muhammad Zaheer

Copyright © 2018 News Makers. All rights reserved.